Tech Urdu

ایمازون کیا ہے اور اس کا تعارف

ایمازون جو کہ دنیا کہ پہلے نمبر کی آن لائن مارکیٹ پلیس ہے، ان  کی ویب سائٹ پر ایک لسٹ جاری کی  گئی ہے جس کے مطابق دنیا کے 104 ممالک کےرہائش پزیر شہری اس ویب سائٹ پر رجسٹریشن کرکےاپنی  چیزیں فروخت کرسکتے ہیں. اگر آپ کا تعلق فہرست پر موجود 104  ممالک میں سے ہے تو آپ کے پاس ایک تصدیق شدہ  فون نمبر اور انٹرنیشنل  کریڈٹ کارڈ ہونا چاہیے. اس کے بعدہی  آپ ایمازون پر ایک سیل اکاؤنٹ بناکر پراڈکٹس فروخت کرسکتے ہیں. ایمازون کے 104 ممالک کی فہرست میں سینیگال، بنگلا دیش، سلوواکیہ، یوگنڈا، موزمبیق اور بھارت  اور اب پاکستان کا نم بھی شامل کر لیا گیا ہے۔

ایمازون کے بارے میں کچھ حقائق کے یہ کتنی بڑی کمپنی ہے؟

 ایمازون  ای کامرس اور لوجسٹکس کی سب سے بڑی کمپنی کہلاتی ہے۔

سال2018 کے اختتام تک ایمازون کے ڈلیوری انفراسٹرکچر میں 181 سے زائد وئیرہائوسز، 28 سورٹنگ سینٹرز، 59 لوکل پیکج ڈلیوری سٹیشنز اور 65 ایسے مراکز (پرائم نائو ایکسپریس)  شامل ہیں جہاں سے پراڈکٹ صارف کو محض 2 گھنٹے میں رسائی حاصل ہوجاتی ہے۔

ایمازون کس نے بنائی؟

مسٹر جیف بیزوز نے ایمازون  جو کہ آج سب سے زیادہ آن لائن کاروبار کرنے والی ویب سائٹ ہے، کا آغاز 1994ء میں ایک آن لائن بُک سٹور سے کتابیں بیچ کر  کیا لیکن آج وہ ایپل اور ایلفابیٹ جیسی بڑی کمپنیوں کو پیچھے چھوڑچکا ہے، اور یہ  ایمازون دنیا کی سب سے بڑی کمپنی بن چکی ہے. یہ اپنی ویب سائٹ کے ذریعے آڈیو، ویڈیو ،ڈائون لوڈز، سافٹ وئیرز،  نئی ویڈیو گیمز، الیکٹرونکس پراڈکٹس،کپڑے،لکڑی کا فرنیچر، خوراک اورجیولری تک سیل کر رہی اور آج کی دنیا کی سب سے بڑی ای کامرس کمپنی بن چکی ہے۔

Amazon Jeff Bezos

ایمازون کا شمار مارکیٹ شیئرز، جدت اور مقابلہ بازی کی نقط نگاہ  سے  آج کل کی  ٹیکنالوجی کی جو  چار بڑی کمپنیاں ہیں جن میں گوگل، ایپل اور فیس بک کے ساتھ ہوچکا ہے اور گزشتہ سال  یہ ٹریلین کا نشان عبور کرچکی ہے۔

ایمازون کمپنی کا اپنا ایک پبلشنگ ہائوس موجود ہے۔

 انھوں نے اپنا ایک فلم اینڈ ٹیلیویژن سٹوڈیو بھی بنا لیا ہے۔ 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!